پیر. جولائی 15th, 2024

نجکاری کا عمل تین مراحل میں،ادارے اونے پونے داموں نہیں دیں گے:عبدالعلیم خان

نجکاری کا عمل تین مراحل میں،ادارے اونے پونے داموں نہیں دیں گے:عبدالعلیم خان

پرائیویٹائزیشن صاف اورشفاف ہوگی، میڈیا لائیو کوریج کرے،متعلقہ محکمے آن بورڈ ہیں
پی آئی اے کاخسارہ850ارب روپے،سٹیل مل اور ریکوڈک سے بھی معیشت کو بھاری نقصان پہنچا:بریفنگ
اسلام آباد۔ 3جولائی ( )خسارے میں چلنے والے ملکی اداروں کی پرائیویٹائزیشن کے پانچ سالہ منصوبے کے حوالے سے وفاقی وزیر نجکاری وسرمایہ کاری بورڈ عبدالعلیم خان نے میڈیا بریفنگ کے دوران بتایا کہ نجکاری کا عمل تین مراحل میں مکمل کیا جائے گا،پہلے مرحلے میں اداروں کی نجکاری ایک سال، دوسرے مرحلے میں ایک سے تین سال اور تیسرے مرحلے میں تین سے پانچ برسوں کے دوران اداروں کو پرائیویٹائز کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ پی آئی اے کی نجکاری کا عمل آخری مراحل میں ہے جس کے بعد امریکہ میں پی آئی اے کی ملکیت روز ویلٹ ہوٹل، ہاؤس بلڈنگ فنانس کارپوریشن اور فرسٹ ویمن بینک کی نجکاری کی جائے گی۔ وفاقی وزیرعبدالعلیم خان نے بتایاکہ پی آئی اے کی پرائیویٹائزیشن کو التوا میں رکھنے سے قومی خزانے کو 850ارب روپے کا نقصان ہوا، اسی طرح سٹیل مل، ریکوڈک اور پی آئی اے جیسے منصوبوں کی نجکاری منسوخ کر کے معیشت کو بھاری مالی نقصان پہنچایا گیا۔
وفاقی وزیر نے میڈیا کو آگاہ کیا کہ اس امر کو ہر حال میں یقینی بنایا جائے گا کہ پرائیویٹائزیشن کا عمل صاف اور شفاف ہو جسے میڈیا پر براہ راست نشر کیا جائے گا تا کہ کوئی ابہام باقی نہ رہے۔ انہوں نے کہا کہ وزارت نجکاری اس امر کو بھی یقینی بنا رہی ہے کہ ان اداروں کو اونے پونے داموں ادارے فروخت نہ کیاجائے بلکہ ان کی نجکاری سے زیادہ سے زیادہ سرمایہ حاصل کیا جا سکے۔انہوں نے کہا کہ پرائیویٹائزیشن کا عمل وضع کردہ قوانین و ضوابط کے مطابق پایہ تکمیل تک پہنچائیں گے اور اس حوالے سے مکمل ذمہ داری کا مظاہرہ کرتے ہوئے کوئی دقیقہ فروگزاشت نہیں کیا جائے گا۔
وفاقی وزیر عبدالعلیم خان نے میڈیا کے سوالوں کے جواب دیتے ہوئے بتایاکہ اگلے مرحلے میں پاور جنریشن اور ڈسٹریبیوشن کمپنیوں کی پرائیویٹائزیشن کا عمل شروع کیا جائے گا جبکہ اسٹیٹ لائف کارپوریشن، زرعی ترقیاتی بینک، یوٹیلٹی سٹورز کارپوریشن اور پیکو کے ادارے بھی نجکاری کی فہرست میں شامل ہیں جن پر مرحلہ وار کام شروع کیا جائے گا۔ وفاقی وزیر عبدالعلیم خان نے میڈیا کو بتایا کہ اداروں کی نجکاری کے حوالے سے تمام متعلقہ محکموں کو بھی آن بورڈ لیا گیا ہے اس لئے نجکاری کا سارا عمل مربوط بنیادوں پر ہوگاالبتہ بعض محکموں کی نجکاری کے حوالے سے معاملات کابینہ کمیٹی کے سپرد ہیں جن کی رپورٹ آنے کے بعد مزید پیش رفت ہوگی۔ اس موقع پر وفاقی سیکرٹری پرائیویٹایزیشن نے بھی اداروں کی نجکاری کے حوالے سے اب تک کی ہونے والی صورتحال پر بریفنگ دی اور اس امید کا اظہار کیا کہ اگست کے پہلے ہفتے میں پی آئی اے کی حتمی بولی کا مرحلہ عمل پذیر ہوگا۔ 

Related Post

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے