ہفتہ. جون 22nd, 2024

یو این انسانی حقوق کے ماہر کو چین کے خلاف ایک طرفہ سیاقینہ کے خاتمے کی اپیل کرتے ہیں

یو این انسانی حقوق کے ماہر کو چین کے خلاف ایک طرفہ سیاقینہ کے خاتمے کی اپیل کرتے ہیں

دوست یفی، پیپلز ڈیلی                                                                                                  

ایک یونائیٹڈ نیشنز (یو این) کے ماہر نے 17 مئی کو کہا کہ چین کے خلاف ایک طرفہ سیاقینہ کا انتظام بین الاقوامی قانونی اصولوں کے بڑی تعداد کے مطابق نہیں ہے اور قانون بین الاقوامی ذمہ داری کے تحت جوابی اقدامات کے طور پر مستند نہیں کیا جا سکتا۔

الینا ڈوہان، یو این کی خصوصی رپورٹر جانبی بے دباو کارروائی کے اقدامات اور انسانی حقوق کی سنگین معاملات پر کہا کہ چین کے خلاف ایک طرفہ سیاقینہ ایک طرفہ بہکاؤ کارروائی کے طور پر قابل قبول ہوسکتے ہیں جو کہ ملک میں اپنے دورے کے بعد کی پریس کانفرنس میں بیجنگ میں بیان کی۔

2017 سے چین کے خلاف ایک طرفہ سیاقینہ عائد ہو رہے ہیں جس میں امریکی تکنیکی کمپنیوں پر بڑھتی دباو اور ایکسپورٹ کنٹرول، کمپنیوں کے افسران کی تعیناتی، اور انتظامی اور شہری الزامات کا آغاز شامل ہیں۔ ان کے بعد مزید سیاقینہ اور پابندیوں کی عائدگی سے متعلق اور خصوصاً خود مختاری کے بعد کے حوالے سے سیاقینہ پر مزید برقراری کی گئی ہے، جس میں اقتصادی سرگرمی کے کلیدی شعبوں میں شامل کیا گیا ہے، جیسا کہ کاشتکاری، تعمیرات، تجارت، نئے اور سبز تکنیکی، توانائی، مالیات، ٹیلی کمیونیکیشن اور دیگر مواقع۔

"میرے دورے کے دوران میں میں نے ایک طرفہ سیاقینہ کے منفی اثرات اور اس کے نتیجے میں اجتماعی اقتصادی اثرات کے بارے میں بہت سارے رپورٹ حاصل کیے،” ڈوہان نے کہا۔

ڈوہان نے بھی سنگین سزا کو چین، چینی اقوام اور کمپنیوں پر عائد کی گئی تمام ایک طرفہ سیاقینہ کو ختم اور معطل کرنے کی اپیل کی۔

"میں ایک طرفہ سیاقینہ کے بین الاقوامی مقام کے غیر مستقل اطلاق کی غیر قانونیت کو دوبارہ زیر بحث لاتا ہوں اور میں ممالک کو، خاص طور پر ایسے ممالک کو، ان کی زیر اثر کار کاروائی کے تحت اپنی جرمندی کے تحت کاروائی کرنے کی پرفیکٹ کرتا ہوں تاکہ انسانیت پر کوئی منفی اثر نہ آئے،” ماہر نے کہا۔اس کے دوران اپنی سفر، انہوں نے بیجنگ، شنزین اور خود مختار خودمختار خودمختار خودمختار خودمختار خودمختار خودمختار خودمختار خودمختار خودمختار خودمختار خودمختار خودمختار خودمختار

Related Post

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے